Sang E Mah OST Lyrics | Atif Aslam 2022

Sang E Mah OST:

Melidious Sang e Mah OST sung by phenomenal singer Atif Aslam and Compose by Sahir Ali Bagga. Lyrics by Fatima Najeeb and written by Mustafa Afridi.

Sang E Mah Song Lyrics:

Ishq Hai Janoon Hai
Ya woh Bekhudi Ka Dhamal Hai
Tujhe Kia Khaber Hai
Ohh Bekhaber Gham-e-Zindgi
Tu Kamal Hai
Ohh Bekhaber Gham-e-Zindgi
Tu Kamal Hai
Wo Khud Bhi Mila Nhe

Tuje Kia Mile Ga, Tujhe Kia Mile Ga
Wo Hai Bekhaber, Wo Hai Gumshuda
Tujhe Kia Mile Ga
Tu To Khawahishon Kay Seher Mein Hai
Tu To Chahaton Kay Safer Mein Hai
Na Hai Hosh Apne Wajood Ka Na Khiaal Hai
Ja Baja Tu Chal Dia
Phir Kahan Dhondhta Hai Kyun Tu Sang e Mah
Ja Baja Tu Tu Chal Dia Phir Kahan
Dhondhta Hai Kyun Tu Sang e Mah
Dhondhta Hai Kyun Tu Sang e Mah

Kai Roop Tere Aay Zindgi
Her Roop Mein Kei Rung
Tujhe Phool Kase Milien Bataa
Tere Hath Mein Hai Sang
Jo Suni Gai Hoi Na Bayaan
Ankhai Si Dastaan
Usse Kafle Se Kia Wasta
Woh Hai Khud Mein Karwaan
Woh Jo Khawab Mein Bhi Na Mil Ska
Tujhe Kia Mile Ga
Woh Hai Bekhaber, Vo Hai Ghumsuda
Thuje Kia Mile Ga
Tu To Khawahishow k Seher Mein Hai
Tu To Chahtow K Safer Mein Hai
Na Hai Hosh Apne Wajood Ka Na Khaial Hai
Ja Baja Tu Chal Dia Phir Kahan
Dhondhta Hai Kyun Tu Sang e Mah
Ja Baja Tu Chal Dia Phir Kahan
Dhondhta Hai Kyun Tu Sang e Mah

Usse Zakham Se Meli Roshni
Kai Raaz Aise Aayan Huve
Woh Nazer Mein Aakay Teher Gaye
Jo Na Lab Se Dard Bayaan Hoye.

Sang E Mah OST Lyrics in Urdu:

عشق ہے، جنوں ہے
یا وہ بے خودی کا دھمال ہے
تجھے کیا خبر ہے؟
او، بے خبر غمِ زندگی تو کمال ہے
او، بے خبر غمِ زندگی تو کمال ہے
وہ جو خود کو بھی ملا نہیں، تجھے کیا ملے گا؟
وہ ہے بے خبر، وہ ہے گمشدہ
تجھے کیا ملے گا؟
تُو تو خواہشوں کے شہر میں ہے
تُو تو چاہتوں کے سفر میں ہے
نہ ہے ہوش اپنے وجود کا، نہ خیال ہے
جا بجا تُو چل دیا، پھر کہاں
ڈھونڈتا ہے کیوں تُو سنگِ ماہ؟
جا بجا تُو چل دیا، پھر کہاں
ڈھونڈتا ہے کیوں تُو سنگِ ماہ؟
سنگِ ماہ
کئی روپ تیرے، اے زندگی
ہر روپ میں کئی رنگ
تجھے پھول کیسے ملے، بتا؟
تیرے ہاتھ میں ہے سنگ
جو سنی گئی، نہ ہوئی بیاں
انکہی سی داستاں
اُسے قافلے سے کیا واسطہ؟
وہ ہے خود میں کارواں
وہ جو خواب میں بھی نہ مل سکا
تجھے کیا ملے گا؟
وہ ہے بے خبر، وہ ہے گمشدہ
تجھے کیا ملے گا؟
تُو تو خواہشوں کے شہر میں ہے
تُو تو چاہتوں کے سفر میں ہے
نہ ہے ہوش اپنے وجود کا، نہ خیال ہے
جا بجا تُو چل دیا، پھر کہاں
ڈھونڈتا ہے کیوں تُو سنگِ ماہ؟
جا بجا تُو چل دیا، پھر کہاں
ڈھونڈتا ہے کیوں تُو سنگِ ماہ؟
سنگِ ماہ
اُسے زخم سے ملی روشنی
کئی بھید ایسے عیاں ہوئے
وہ نظر میں آکے ٹھہر گئے
جو نہ لب سے درد بیاں ہوئے

Leave a Reply

Your email address will not be published.